Header Ads

.....Raz Dil Ka Batana Ghazab Hogaya



تیرا گلشن میں جانا غضب ہوگیا
اپنا جلوہ دکھانا غضب ہوگیا

دل کا عالم بتانا غضب ہوگیا
"انکو اپنا بنانا غضب ہوگیا"

ایک ہی پل میں وہ میری لیلیٰ بنی
اک مرا مسکرانہ غضب ہوگیا

دوسرے لمحہ مجنوں میں اسکا ہوا 
اس کا ہنسنا ہنسانا غضب ہوگیا

میرے دشمن زمانے مین بڑھتے گئے
راز دل کا بتانا غضب ہوگیا

زندگی بھر میں اسکو مناتا رہا
اس کے دل کو چرانا غضب ہوگیا


محفلِ حسن میں کھلبلی مچ گئی
اس جگہ میرا جانا غضب ہوگیا

یاد غزلوں کو اس نے میری کر لیا
بس مرا گنگنانا غضب ہوگیا

تم کو پانے میں دنیا کی پراہ نہ کی
تم سے دل کو لگانا غضب ہوگیا

مجھ کو نیچا دیکھانے کی تدبیر کی
اس کو خوشیاں دکھانا غضب ہوگیا

کر کے اسعدؔ عہدِوفا یک بیک
اسکا یوں روٹھ جانا غضب ہوگیا
A330Pilot کی طرف سے پیش کردہ تھیم کی تصویریں. تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.