Header Ads

سیرۃ النبیﷺ│قسط نمبر 4

رسالت ماٰبﷺ کی چار پشتیں۔۔۔
بزرگوں کاکہناہے کہ سرکار دوعالمﷺ کی کم ازکم چار پشتوں کے نام یادرکھنا ضروری ہیں اور اس کا بہت ثواب ہے۔ ہرمسلمان کو چاہیے کہ وہ خوداپنی اولاد اور اپنے عزیزواقارب کو اپنے پاک پیغمبرﷺ کی چارپشتوں یعنی حضرت عبداللہ، عبدالمطلب، ہاشم، عبدمناف تک کے نام ضرور یاد کرائیں۔

آنحضرتﷺ کے پردادا ہاشم۔
جناب رسالت ماٰبﷺ کے پردادا ہاشم کا اصل نام عمر تھا۔ آپ نہایت حسین، بہادر، سخی، مہمان نواز اور صاحب بصیرت انسان تھے۔
مکہ میں جب قحط پڑگیاتو آپ نے سب سے پہلے یہ طریقہ اختیار کیا شوربہ کے اندر روٹی کے ٹکڑوں کوچور کرکے ڈالا اور اہل مکہ کے متاثرین کئی بار کھلایا۔ "ہشم" کے معانی "چور" کرنے کے ہیں اسی بناپر آپ کا نام ھاشم پڑگیا۔
آپ جوان رعنا تھے نور نبوت آپ کی پیشانی پر چمکتاتھا۔ بنی اسرائیل کے علماء اور حکماء آپ کودیکھتے تو عزت وتکریم کی خاطرسجدہ کرتے اور ان کے ہاتھ چومتے۔ قبائل عرب کے بڑے بڑے سردار اور علماء بنی اسرائیل نکاح کے لیے اپنی بیٹیاں پیش کرتے۔ شاہ روم نےاپنی شہزادی کے رشتے کی پیشکش کی۔ ان تمام لوگوں  کی خواہش تھی کہ کسی طرح نور نبوت ان کی طرف منتقل ہوجائے۔
ہاشم پہلے سردار تھے جنہوں نےسال میں دومرتبہ تجارت کا دستورجاری کیا۔
موسم گرما میں شام کی طرف اور موسم سرما میں یمن اور حبش کی طرف۔
ہاشم تجارت کی غرض سے مدینہ ٹھہرے تووہاں آپ کی نظر ایک عورت پرپڑی جن کانام سلمٰی تھا۔ وہ شرم وحیا، دیانت و شرافت اورفہم وفراست کا پیکر تھیں۔ ہاشم نے انہیں نکاح کاپیغام بھجوایا اس طرح ہاشم اور سلمٰی کانکاح ہوگیا۔
خداتعالٰی نے اپنے محبوبﷺ کے لیے مدینہ سے تعلق جوڑنے کے لیے پردہ غیب سے اہتمام فرمادیا۔
ہاشم کچھ عرصہ مدینہ میں رہے سلمٰی کے بطن میں عبدالمطلب آئےکہ حضرت ہاشم کا انتقال ہوگیا۔۔۔۔
(جاری ہے)

مضمون نگار:۔ محمدابوبکرصدیق
پتہ:۔ کراچی│پاکستان
رابطہ:۔ مضمون نگار کی اجازت کے بغیر برقی پتہ یا موبائل نمبر شائع نہیں کیا جاتا۔
A330Pilot کی طرف سے پیش کردہ تھیم کی تصویریں. تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.